A GHAZAL BY DR AHMAD ALI BARQI AZMI RECITWD BY YAQUB MALIK KHAN

Dr Fariyad Azer Speaks About The Services Of Sardar Ali To The Cause Of Urdu In Monthly Literary Meet Of Ghalib Academy New Delhi In Which He Was Chief Guest

Ahmad Ali Barqi Azmi Paying Poetic Compliment To Janab Sardar Ali Admin https://sherosokhan.net/ For His Services To The Cause Of Urdu Language And Literature Through His Website And Also Reciting His Ghazal In The Monthly Literary Meet Of Ghalib Academy New Delhi



نذر ادب و ادیب نواز ناظم شعرو سخن ڈاٹ نیٹ محترم سردار علی، ٹورانٹو کینیڈا
خوش آمدید بہ غالب اکیڈمی نئی دہلی
احمد علی برقی اعظمی
ٹورانٹو ، کینیڈا سے جناب سردار علی کے زیر ادارت شایع ہونے والی شہرۂ آفاق ویب میگزین شعرو سخن ڈاٹ کام پر منظوم تاثرات
https://sherosokhan.net/
ڈاکٹر احمد علی برقیؔ اعظمی
اردو کی شعر و سخن اک ایسی ہے ویب میگزین
جس کے دنیا بھر میں ہیں موجود لاکھوں شایقین
اِس کے ٹورانٹو میں ہیں سردار علی واحد مدیر
کرتے ہیں ہموار جو فکری تناظر کی زمین
حق شناسی کا تقاضا ہے کہ کچھ اُن پر لکھوں
میں سمجھتا ہوں اسے اک اپنا فرضِ اولین
میرے کہنے پر نہ جائیں آپ خود ہی دیکھ لیں
آپ کو بھی دیکھ کر ہوجائے گا اس کا یقین
اُن کی یہ خدمات ہیں سود و زیاں سے بے نیاز
ہے یہ ترویجِ ادب کا کارنامہ بہترین
خدمتِ اردو ہے روحانی غذا اُن کے لئے
اپنی تہذیب و ثقافت کے ہیں وہ برقیؔ امین

Ahmad Ali Barqi Azmi Paying Poetic Compliment To Janab Sardar Ali Admin https://sherosokhan.net/ For His Services To The Cause Of Urdu Language And Literature Through His Website And Also Reciting His Ghazal In The Monthly Literary Meet Of Ghalib Academy New Delhi

مجاز کی زمین میں ایک غزل (نذرِ مجاز ) احمد علی برقی اعظمی






یک زمین کئی شاعر
احمد علی برقی اعظمی اور مجاز لکھنوی
مجاز لکھنوی

تسکینِ دلِ محزوں نہ ہوئی، وہ سعئ کرم فرما بھی گئے
اس سعئ کرم کو کیا کہیے، بہلا بھی گئے تڑپا بھی گئے

ہم عرضِ وفا بھی کر نہ سکے، کچھ کہہ نہ سکے کچھ سن نہ سکے
یاں ہم نے زباں ہی کھولی تھی، واں آنکھ جھکی شرما بھی گئے

آشفتگیِ وحشت کی قسم، حیرت کی قسم، حسرت کی قسم
اب آپ کہیں کچھ یا نہ کہیں، ہم رازِ تبسّم پا بھی گئے

رُودادِ غمِ الفت اُن سے، ہم کیا کہتے، کیوں کر کہتے
اِک حرف نہ نکلا ہونٹوں سے اور آنکھ میں آنسو آ بھی گئے

اربابِ جنوں پر فرقت میں، اب کیا کہیے، کیا کیا گزری
آئے تھے سوادِ الفت میں، کچھ کھو بھی گئے کچھ پا بھی گئے

یہ رنگِ بہارِ عالم ہے، کیوں فکر ہے تجھ کو اے ساقی
محفل تو تری سونی نہ ہوئی، کچھ اُٹھ بھی گئے، کچھ آ بھی گئے

اِس محفلِ کیف و مستی میں، اِس انجمنِ عرفانی میں
سب جام بکف بیٹھے ہی رہے، ہم پی بھی گئے چھلکا بھی گئے

مجاز کی زمین میں ایک غزل (نذرِ مجاز )
احمد علی برقی اعظمی

وہ ایک جھلک دکھلا بھی گئے،وعدوں سے ہمین بہلا بھی گئے

اک لمحہ خوشی دےکر ہم کو،برسوں کے لئے تڑپا بھی گئے

دیدار کی پیاسی تھین آنکھیں،کچھ دیر وہ کاش ٹھہر جاتے

اک چشمِ زدن میں ایسے گئے،ہم کھو بھی گئے اور پا بھی گئے

آنکھوں مین شرابِ شوق لئے،دروازۂ دل سے یوں گذرے

میخانۂ ہستی مین آکر ،وہ پی بھی گئے چھلکا بھی گئے

ہے رنگِ مجاز بہت دلکش،جو شعرو سخن میں تھے یکتا

اپنے اشعار سے جو سب کو ،بہلا بھی گئے تڑپا بھی گئے

کچھ دیر انہیں نہ لگی برقی،آئے بھی اور گذر بھی گئے
وہ غنچۂ دل کو کھلا بھی گئے،جو کِھلتے ہی مُرجھا بھی گئے


اردو زبان و تہذیب کے سب سے بڑے جشن ’جشن ریختہ ‘ کی آمد · پانچویں جشن ریختہ کی سہ روزہ تقریبات ۱۴۔۱۵۔۱۶ دسمبر کو میجر دھیان چند نیشنل اسٹیڈیم ، دلی میں منعقد ہوں گی۔







اردو زبان و تہذیب کے سب سے بڑے جشن ’جشن ریختہ ‘ کی آمد

·      پانچویں جشن ریختہ کی سہ روزہ تقریبات ۱۴۔۱۵۔۱۶ دسمبر کو میجر دھیان چند نیشنل اسٹیڈیم ، دلی میں منعقد ہوں گی۔
·      جشن کا افتتاح ۱۴ دسمبر کو  معروف اور مقبول روحانی  پیشوا مراری باپو  کریں گے۔
·      افتتاح کے بعد  جشن کی تقریبات  کا آغا ز معروف صوفی موسیقی کار اور  قوال وڈالی صاحبان   کی پیشکش سے ہوگا۔
·      جشن میں ہر بار کی طرح اس بار بھی ادب ، فلم ،تھیٹر  اور  آرٹ  کی دنیا سے اہم ترین شخصیات شامل ہورہی ہیں، جن میں خاص طور پر  معروف فکشن نویس  اقبال مجید ،  گوپی چند نارنگ،شارب ردولوی ،شمس الرحمان فاروقی، شمیم حنفی،رتن سنگھ، پروشتم اگروال، جاوید اختر  ، شبانہ اعظمی، مالنی اوستھی ،وشال بھاردواج، استاد اقبال احمد خان،انو کپور، گائتری اشوکن ، وارثی برادر،نوراں سسٹر ، قابل ذکر ہیں۔
·      خواتین فن کاروں کی بھر پور نمائندگی کے لیے ’خواتین کا مشاعرہ‘ جشن ریختہ کی تقریبات کا اہم حصہ ہے۔
·       اردو تہذیب کے مخلتف رنگوں اور ذائقوں کو نمایاں کرنے کے لیے اردو بازار بھی جشن کی ایک خاص پیشکش ہوگی۔
·      ’ایوان ذائقہ ‘کھان پان کے شوقین لوگوں کے لئے ایک مخصوص مقام ہوگا، جس میں کشمیری،حیدر آبادی ، لکھنوی اور پرانی دلی کے پکوانوں کی بہار ہوگی۔
·      جشن ریختہ میں داخلہ مفت ہوگا ، صرف رجسٹریشن لازمی ہے، جو جشن ریختہ ویب سائٹ یا تقریب کے مقام پر کیا جا سکتا ہے

(نئی دہلی  ۱دسمبر ۲۰۱۸) پانچویں جشن ریختہ کی سہ روزہ  تقریبات کا آغاز ۱۴ دسمبر سے دلی کے میجر دھیان چند نیشنل اسٹیڈیم میں ہونے جارہا ہے۔ جشن ریختہ اپنی گزشتہ چار تقریبا ت  کی غیر معمولی کامیابی کے سبب دنیا بھر میں اردو زبان و تہذیب کے سب سے بڑے جشن کے طور پر جانا جاتا ہے۔ اس بار پھر سال کے اختتام پر یہ جشن دلی اور باہر کے لوگوں کے لیے اردو زبان ،ادب اور تہذیب کو قریب سے جاننے اور اس کے  مختلف ذائقوں کو محسوس کرنے کا سبب بنے گا۔
۱۴ دسمبرشام چھ           بجے معروف روحانی شخصیت مراری باپو جشن کا افتتاح کریں گے ۔اس کے بعد انتہائی مقبول صوفی موسیقی کار اور قوال وڈالی صاحبان اپنے نغموں سے رونق بخشیں گے۔ ۱۵ اور ۱۶ دسمبر   کو ادبی مذاکرے، داستان گوئی،چہار بیت، ڈراما، قوالی،غزل سرائی ،نوجوان شاعروں کی محفل ، خواتین کا مشاعرہ ،تمثیلی مشاعرہ، خطاطی،فلم اسکرینگ اور بہت سی دلچسپ تقریبات  کے ذریعے اردو زبان اور اس کے تہذیبی رنگوں  کو پیش کرنے کی کوشش کی جائے گی۔جشن میں ہر بار کی طرح اس بار بھی ادب ، فلم،تھیٹر  اور  آرٹ  کی دنیا سے اہم ترین شخصیات شامل ہورہی ہیں، جن میں خاص  طور پر  معروف فکشن نویس  اقبال مجید ،  گوپی چند نارنگ،شارب ردولوی،شمس الرحمان فاروقی، شمیم حنفی،ذکیہ مشہدی ،رتن سنگھ، پروشتم اگروال، صدیق الرحمان قدوائی ،سدھیر چندرا،جاوید اختر  ، شبانہ اعظمی، مالنی اوستھی ،وشال بھاردواج، استاد اقبال احمد خان،انو کپور، محمود فاروقی ،جاوید جعفری ،گائتری اشوکن،شروتی پاٹھک، وارثی برادر،نوراں سسٹر ، قابل ذکر ہیں۔
جشن  میں ہر سال کی طرح اس سال بھی چار اسٹیج ہوں گے اور چاروں پر ایک ساتھ الگ الگ رنگ اور ذائقے بھرے پروگرام چل رہے ہوں گے۔ ۱۵ تاریخ کوبزم خیال یعنی  آڈیٹوریم میں اردو پریمیوں کے لیےممتاز فکشن نویس اقبال مجید  اور رتن سنگھ کو سننا ایک یاد گار تجربہ ہوگا ۔اس کے بعد گوپی چند نارنگ فیض احمد فیض  کی زندگی اور ان کے عشق  پر بات کریں گے ،وہیں  محفل خانے میں جاوید اختر اور شبانہ اعظمی جانثار اختر اور کیفی اعظمی کی زندگی اور شاعری پر اپنے خیالات کا اظہار کریں گے۔اسی دن چہار بیت بھی جشن ریختہ کی ایک خاص پیشکش ہوگی۔ ہندی سے پروشتم اگروال اورعبدل بسم اللہ معروف ٹی وی میزبان دبانگ کے ساتھ کبیر کی روحانی وراثت اور ان کے انہد ناد پر بات کریں گے۔
اس بار جشن میں ایک اہم گفتگو ادب کے سماجی رشتے کے حوالے سے بھی ہوگی۔ اس سیشن میں معروف نقاد شارب ردولوی ، علی احمد فاطمی او ر ہندی کے معروف شاعر  اسد زیدی شامل رہیں گے۔ اگلے دن کی شروعات دلی گھرانے کے استاد اقبال احمد خاں کے صوفی کلام سے ہوگی ۔ اسی کے ساتھ فارسی اور سنسکرت کے رشتوں پر ایک گفتگو میں اہم علمی و ادبی  شخصیات شامل رہیں گی۔ممتاز نقاد شمس الرحمان فاروقی  محمود فاروقی کے ساتھ انتظار حسین کی کہانیوں پر بات کریں گے۔صوفی  موسیقی کے شائقین کے لیے وارثی برادران اور نوراں بہنوں کو سننے کا بھی  ایک خاص موقع ہوگا۔ساتھ ہی  معروف فلم اداکار   اور موسیقی کار انو کپور مجروح سلطان پوری کی زندگی، شاعری اور ان کے نغموں پر مشتمل  ایک بہترین پروگرام پیش کریں گے۔عسکری نقوی کی سوز خوانی اور مالنی اوستھی کے فوک نغمے اور موسیقی کا لطف بھی خاصے کی چیز ہوگی۔ اس سب  کے علاوہ متعدد علمی و ادبی شخصیتیں جشن کی رونق میں اضافہ کریں گی۔
اردو تہذیب اور کلچر کی نمائندگی کے لیے اردو بازار  کا بھی اہتمام کیا جارہا ہے ،جس میں اردو تہذیب کی یادگاروں کو نمائش اورخرید و فروخت کے لیے پیش کیا جایے  گا۔ کھان پان کے شوقین لوگوں کے لیے ایک فوڈ کورٹ بھی لگایا جا رہا ہے جس میں کشمیری،حیدر آبادی ، لکھنوی اور پرانی دلی کے پکوانوں کی بہار ہوگی۔
جشن ریختہ کے موقعے پر ریختہ فاؤنڈیشن کے بانی سنجیو صراف کا کہنا ہے کہ ’’ہماری کوشش ہر ممکن ذریعے سے اردو زبان  و تہذیب  کو فروغ دنیا ہے۔ ریختہ ویب سائٹ کے ساتھ جشن ریختہ کی تقریبات  بھی ہماری انہیں کوششوں کا حصہ ہیں۔ گزشتہ چار  برس میں جشن ریختہ  کو  ملی بے پناہ کامیابی  اور ہر طبقے و عمر کے لوگوں میں اس کی مقبولیت نے ہمارے ارادوں کو مضبوط کیا ہے۔اس سال بھی ہم پوری توانائی  کے ساتھ  اس جشن کا انعقاد کر رہے ہیں۔ ہمیں یقین ہے  کہ ہر سال کی طرح اس سال بھی یہ جشن  اردو کی مٹھاس  اور اس کی تہذیب میں پوشیدہ یگانگت کے پیغام کو دور تک لے کر جائے گا‘‘۔



اردو کی شہرۂ آفاق ویب سایٹ ریختہ کی علمی و ادبی خدمات پر منظوم تاثرات
ڈاکٹر احمد علی برقیؔ اعظمی
ریختہ جس کا بڑا نام ہے کیا عرض کروں
یہ ہمارے لئے انعام ہے کیا عرض کروں
فالِ نیک اس کاہے اردو کے لئے اپنا وجود
جس کا فیضانِ نظر عام ہے کیا عرض کروں
آپ خود دیکھ لیں کہنے پہ نہ جائیں میرے
وہ بھی اس میں ہے جو گُمنام ہے کیا عرض کروں
میرا مجموعۂ اشعار ہے اس کی زینت
بادۂ شوق کا یہ جام ہے کیا عرض کروں
اپنی میراثِ ادب کرتے ہیں کیسے محفوظ
اِس کا سب کے لئے پیغام ہے کیا عرض کروں
کسی مسلم کو نہ دی اِس کی خدانے توفیق
آپ بھی دیکھ لیں کیا کام ہے کیا عرض کروں
یہ کُتبخانۂ معروف ادب کا برقیؔ
ایسی اک جلوہ گہہِ عام ہے کیا عرض کروں


شہرۂ آفاق اردو ویب سایٹ ریختہ ڈاٹ او آرجی کے بانی اور روح رواں جناب سنجیو صراف کی نذر
احمد علی برقیؔ اعظمی
مستحق اعزاز کے ہیں ایس صراف
ریختہ ہے جن کی منظورِ نظر
ہے یہ ویب سایٹ نہایت معتبر
اس لئے ہے مرجعِ اہلِ نظر
کارنامہ ہے یہ اک تاریخ ساز
ہے جو نخلِ علم و دانش کا ثمر
پیش کرتا ہوں مبارکبا د اسے
اس کا جلوہ ہر جگہ ہو جلوہ گر
ہو چکے ہیں اس کے اب تک چار جشن
جشن پنجم سے بھی سب ہوں بہرہ ور
جاری و ساری ہو اس کا فیض عام
اس کے ہوں مداح برقیؔ دیدہ ور

    





DarakhshaN Siddiqi is Reciting Dr. Barqi Azmi's Ghazal at Ghalib Academy of Canada's Annual Tarhi mushaera which took place on 18th November, 2018 in Canada.

انتخاب کلام احمد علی برقی اعظمی



انتخاب کلام برقی اعظمی 

• اک یادوں کی بارات اِدھر بھی ہے اُدھر بھی
• اب شدتِ جذبات اِدھر بھی ہے اُدھر بھی
یہ ترکِ تعلق کا نتیجہ ہے کہ جس سے
اب شوقَ ملاقات اِدھر بھی ہے اُدھر بھی
ساتھ رہتے ہوے بے شمار آدمی
مثلِ سیماب ہے بیقرار آدمی
مال و زر پر یہ مرتا ہے سارا جہاں
یہ بتائیں کرے کس سے پیار آدمی
گذر رہے ہیں شب و روز کس زمانے میں
مرا ہی نام نہیں ہے مرے فسانے میں
درِ دل پر ہوں میں اب تیرے لئے چشم براہ 
میں ہو مشتاق ترا بھول نہ جانا اے دوست
میری غزلوں کا ہے موضوع سخن تیرا خیال
روح پرور ہے بہت دل کا لگانا اے دوست
وہ ایک جھلک دکھلا بھی گئے
وعدوں سے ہمیں بہلا بھی گئے 
اک لمحہ خوشی دے کر ہم کو 
برسوں کے لئے تڑپا بھی گئے
آنکھوں میں شرابِ شوق لئے دروازۂ دل سے یوں گذرے
میخانۂ ہستی میں آکر وہ پی بھی گئے چھلکا بھی گئے
خدا کسی کو نہ وہ ذوق خودنمائی دے
نہ جس سے اپنے سوا اور کچھ دکھائی دے
کنویں میں ڈال دے یوسف سے مہ جبیں کوجو
کبھی کسی کو خدایا نہ ایسا بھائی دے
کیا اس سے بیاں حالِ زبوں اپنا تو یہ بولا 
جئے، ہے جس کوجینا اور جسے مرنا ہے مر جائے
تو بجھانا چاہتا ہے میری قسمت کے چراغ
بجھ نہ جائیں دیکھ تیری شان و شوکت کے چراغ
ہو نہ جائے ان سے گل تیری بھی شمعِ زندگی
ہر طرف تونے جلائے ہیں جو نفرت کے چراغ
سب کرو بس نگہہِ ناز چرانے کے سوا
کچھ بھی کہہ سکتے ہو تم لوٹ کے جانے کے سوا
کُھلا ہے میرا چلے آئئے دریچۂ دل
پڑھا نہیں ہے ابھی کیا مرا جریدۂ دل
دھڑک رہے ہیں فقط آپ اس کی دھڑکن میں
سوائے آپ کے کوئی نہیں وظیفۂ دل
مار ڈالے نہ یہ تنہائی کا احساس مجھے
منتظر جس کا تھا اب وہ نہیں آنے والا
اس نے منجدھار میں کشتی کو مری چھوڑ دیا 
تھا جو طوفان حوادث سے بچانے والا
اِس دور کا اُس دور سے دستور جدا ہے 
حق چھین لیا کرتے ہیں مانگا نہیں کرتے
ہمیں ایک دوسرے پر اگر اعتبار ہوتا
مجھے اس سے پیار ہوتا اسے مجھ سے پیار ہوتا
یہ خمیر جسم و جاں ہے غم و رنج کا مرقع 
غمِ زندگی نہ ہوتا غمِ روزگار ہوتا
کرنے سے پہلے قتل مجھے سوچتے ہیں وہ
’’ دو گز زمیں بھی چاہئے دو گز کفن کے بعد‘‘
اس جرم بے گناہی کی اب پوچھتے ہیں وہ
ہے اور بھی سزا کوئی دارو رسن کے بعد
کسی کی ہوئی ہے کہ میری یہ ہوگی 
بہت جلد ہی بھول جائے گی دنیا


سراج الادب کی ایک شام برقی اعظمی کے نام : فتتاحیہ اشعار و اظہار امتنان و تشکر بحضور سراج الادب ادبی فورم ڈاکٹر احمد علی برقی اعظمی






ایک شام برقی اعظمی کے نام
افتتاحیہ اشعار و اظہار امتنان و تشکر بحضور سراج الادب ادبی فورم 
ڈاکٹر احمد علی برقی اعظمی
میں سراج الادب کا ہوں ممنون
جس نے بخشا ہے مجھ کو یہ اعزاز
فیس بُک پر ہے یہ سفیر ادب
ہے سبھی فورموں سے یہ ممتاز
سلسلہ اس کا ’’ شاعر امروز ‘‘
اس کے حسنِ عمل کا ہے غماز 
ہے یہ اردو ادب کا شیدائی
منفرد اس کا سب سے ہے انداز
یہ کرے سب کی ہمت افزائی
باعث فخر اس کا ہے آغاز 
قابلِ قدر ہیں ندیم ولی
درِ دانش جو کررہے ہیں باز
مستحق داد کی ہیں شمع ندیم
ہے بلند ان کے ذہن کی پرواز
اس میں عینا اسیر و خضری کا
حسنِ فکر و نظر ہے مایہ ٔ ناز
لبنیٰ اطہر ، حبیبہ سرور بھی
اس میں ہیں اپنے وقت کی آواز
آج کی شام ہے جو میرے نام
ہے یہ میرے لئے بڑا اعزاز
جملہ احباب کا بھی ہوں ممنون
کامیابی کا ہیں جو اس کی راز
ہے دعا ایسے ہوں سبھی فورم
جیسے برقی ہے یہ ادیب نواز
پیشکش : محبی محمد مجید اللہ

Top of Form
Bottom of Form



Yaqub Malik Khan Recites A Ghazal Of Mohammad Waliullah Wali

عشق نگر اردوشاعری کے 50 ویں گولڈن جبلی آنلاین فی البدیہہ طرحی مشاعرے کے لئے میری طبع آزمائی احمد علی برقی اعظمی





عشق نگر اردوشاعری کے 50 ویں گولڈن جبلی آنلاین فی البدیہہ طرحی مشاعرے کے لئے میری طبع آزمائی
احمد علی برقی اعظمی
گذرے نہ وہ کسی پہ جو مجھ پر گذر گیا
شیرازۂ حیات اچانک بکھر گیا
سوہانِ روح میرے لئے تھا یہ سانحہ
دے کر پیامِ دربدری نامہ بَر گیا
میرا خیالِ خام تھا وہ یا کچھ اور تھا
ہمزاد ساتھ ساتھ رہا میں جدھر گیا
دل تھا مزارِ حسرت و ارماں مرے لئے
میرا نہالِ آرزو بے موت مَر گیا
فضل خدا سے وار سبھی بے اثر رہے
تیرِ قضا قریب سے ہو کر گزر گیا
مفلوج ہو کے رہ گیا تخلیق کا عمل
سر سے خمار شاعری میرے اُتر گیا
مستی شراب شوق کی کافور ہو گئی
’’سارا خمار شیشۂ دل میں اُ تر گیا‘‘
ہے ماجرائے شوق یہ برقی کا دلفگار
سیلاب ابتلا تھا جو سر سے گزر گیا


عشق نگر اردوشاعری کے۵۰ویں گولڈن جبلی آنلاین فی البدیہہ طرحی مشاعرے کے لئے میری دوسری کاوش
احمد علی برقیؔ اعظمی
مجھ سے وہ کرکے وعدہؐ فردا مُکر گیا
تھا جو رقیب اس کا مقدر سنور گیا
کرنا تھا جس کو وار وہ کرکے گذر گیا
الزام اُس کے شر کا جو تھا میرے سر گیا
مُرغِ خیال کے جو مرے پر کَتر گیا
وہ تو ابھی یہیں تھا نہ جانے کدھر گیا
آیا نہ راس عشق نگر کا سفر مجھے
تیرِ نگاہ ناز جگر میں اُتر گیا
اب تک سمجھ رہا تھا جسے اپنا ناخدا
کشتئ دل کو لے کے جہاں تھی بھنور گیا
دیوانہ وار چلتا رہا اس کے ساتھ میں
لے کر جنونِ شوق مجھے جس ڈگر گیا
برقیؔ شکار گردشِ دوراں ہے ان دنوں
اپنی گلی میں اپنے ہی سائے سے ڈر گیا



BIN TUMHARE HAI YE JAHAN TANHA A GHZAL BY DR BARQI AZMIMUSIC COMPOSER & SINGER YAQOOB MALIK

Yaqub Malik Sings Barqi Azmi's Ghazal: DAYAARE SHAUQ MAIN PHIR SO GAYA TO A GHAZAL BY DR AHMAD ALI BARQI AZMI

یاد رفتگاں : بیاد پروین شاکر احمد علی برقی اعظمی



یاد رفتگاں : بیاد پروین شاکر
احمد علی برقی اعظمی
ہے یہاں آسودۂ خاک ایک ایسی شاعرہ
شہرۂ آفاق تھا جس کے سخن کا دایرہ
مرجع اہل نظر ہے اس کا آفاقی پیام
ناگہانی موت جس کی ہے ادب کا سانحہ
نام تھا پروین شاکر تھی جو ہر سو ضوفگن
منقطع ایسا ہوا وہ روشنی کا سلسلہ
اردو دنیا آج بھی ہے اس کے غم میں سوگوار
تلخ تھا جس کے لئے یہ زندگی کا ذایقہ
مظہرِ سوزِ دروں ہے اس کا معیاری کلام
جذبۂ نسواں کا جس کی شاعری ہے تجزیہ
فکر و فن کا آج بھی ہوتا جہاں اس کے اسیر
پیش آتا گر نہ اس کو ناگہانی حادثہ
مِل گئے برقی عزایم ساتھ اس کے خاک میں
کررہی تھی ندرتِ فکر و نظر کا تجزبہ


احمد علی برقی اعظمی کی غزلیہ شاعری (ایک تجزیاتی مطالعہ) تحریر: جناب سرورعالم راز سرور صاحب ۱۲۲۰۔ انڈین رَن ڈرائیو، نمبر۔۱۱۶ کیرلٹن،ٹیکساس (امریکا) : بشکریہ روزنامہ رہنمائے دکن حیدرآباد