اردو دنیا کے نومبر ۲۰۱۴ کے شمارے میں برقی اعظمی کے شعری مجموعے روح سخن پر تبصرہ بقلم شاکر علی صدیقی، بشکریہ ماہنامہ اردو دنیا






Courtesy : Love Islam Channel Kalam: Ahmad Ali Barqi Azmi Recited By: Azharuddin jalali New Ramadan Kalam 2019-Zikar hai kono makan me Aamade ramadan ka





Courtesy : Love Islam Channel

Kalam: Ahmad Ali Barqi Azmi
Recited By: Azharuddin jalali
New Ramadan Kalam 2019-Zikar hai kono makan me Aamade Ramadan ka

ہرصاحب ایماں کو ہو رمضان مبارک : ہفت روزہ فیس بُک ٹائمز کے زیرِ اہتمام ۸۶ ویں عالمی آنلاین فی البدیہہ طرحی مشاعرے کے لئے میری طبع آزمائی احمد علی برقی اعظمی





ہفت روزہ فیس بُک ٹائمز کے زیرِ اہتمام ۸۶ ویں عالمی آنلاین  فی البدیہہ طرحی مشاعرےکے لئے میری طبع آزمائی
احمد علی برقی اعظمی
ہرصاحب ایماں کو ہو رمضان مبارک
تسبیح و تراویح کا فیضان مبارک
رمضان جو اسلام کی ہے شان مبارک
جو جملہ عبادات کی ہے جان مبارک
اللہ کا بندوں پہ یہ احسان مبارک
تسکینِ دل و روح کا سامان مبارک
روحانی غذا سب کو جو کرتا ہے فراہم
ہر سال میں اک ماہ کا مہمان مبارک
اس ماہِ مبارک کو یہ حاصل  ہے فضیلت
نازل ہوا جو اس میں وہ قرآن مبارک
مسجد میں ہیں محمود و ایاز ایک ہی صف میں
یہ عدل و مساوات کی میزان مبارک
قرآن مجسم ہے جو حفاظ کا سینہ
اس سینے کوگجینۂ عرفان مبارک
ہرشخص کو رمضان کی برکات ہوں حاصل
برقی کو بھی ہو اس کا یہ فیضان مبارک



Dr. Ahmad Ali BarqiAzmi Reciting A Topical urdu poem On Delhi In India International Centre New Delhi India

Ahmad Ali Barqi Azmi Azmi Recites His Ghazals In Bazm e Adab Sarai Of Ja...

Barqi Azmi Recites A Ghazal From Poetry Collection Of Diya GemIn A Literary Meet In New Delhi

Ahmad Ali Barqi Azmi || All India Mushairah New Delhi || Gh Nabi Kumar غ...








 جناب عبد المجید
خان کے شعری مجموعے دستِ ہُنر کی رونمائی پر منظوم تاثرات اور غزل سرائی
احمد علی برقی
اعظمی
شعری مجموعہ ہے
جو دستِ ہنر
اس میں حسنِ فکر
وفن ہے جلوہ گر
اس کے گلہائے
سخن ہیں دلپذیر
نخلِ دانش کا ہے
یہ دلکش ثمر
اس میں عصری
آگہی کی ہے جھلک
ہے نمایاں ندرتِ
فکرو نظر
مطلعِ انوار ہے
یہ پیشکش
روح پرور ہو یہ
تخلیقی سفر
دلنشیں ہے کاوشِ
عبد المجید
ہو یہ برقی
مرجعِ اہلِ نظر

کلام شاعر بہ زبان شاعر : احمد علی برقی اعظمی Kalam E Shair Bazaban E Shair : Ahmad Ali Barqi Azmi

استادان و صاحبنظران از خدمات ارزنده 'نول کشور' به زبان فارسی تقدیرکردند احمد علی برقی اعظمی' شاعر فارسی و اردو سرای هندی از بخش فارسی رادیو دهلی یکی از سروده هایش را در باره منشی نول کشور برای حضار قرائت کرد.






در همایش بین المللی در دانشگاه دهلی
استادان و صاحبنظران از خدمات ارزنده 'نول کشور' به زبان فارسی تقدیرکردند
دهلی نو-ایرنا- شماری از استادان و علاقه مندان زبان فارسی شرکت کننده در همایش بین المللی 'نول کشور و انتشارات در هند استعماری' ، از خدمات ارزشمند' نول کشور' به زبان و ادبیات فارسی تقدیر کردند.
استادان و صاحبنظران از خدمات ارزنده 'نول کشور' به زبان فارسی تقدیرکردند
به گزارش ایرنا، این افراد، جمع آوری نسخه های خطی زبان فارسی دردوره جایگزینی زبان انگلیسی به جای فارسی در هند را بسیار با اهمیت دانستند و اظهار کردند حفظ و چاپ بسیاری از کتاب های فارسی در هند مدیون زحمات وی است.
این افراد از محققان و دانشجویان زبان فارسی خواستند که اهتمام لازم را برای تصحیح و چاپ دوباره این آثار داشته باشند.
سفیر تاجیکستان در هند روز پنجشنبه دراین همایش خدمات 'منشی نول کشور' به زبان فارسی را فراتر از هند و آسیای میانه دانست و تصریح کرد این خدمات ارزشمند دارای تاثیرات جهانی است.
'میرزا شریف جلال اف ' اظهار کرد برگزاری همایش و ارج نهادن به تلاش های وی برای جمع آوری آثار مکتوب فارسی در ان دوره خاص تاریخی از اهمیت زیادی برخوردار است.
وی تصریح کرد کتاب هایی که با زحمت و امانت داری توسط 'نول کشور' جمع آوری و چاپ شده راه مناسبی برای شناخت آن دوره تاریخی است.
'علی دهگایی' رایزن فرهنگی جمهوری اسلامی ایران در دهلی نو نیز دراین همایش گفت تلاش های 'منشی نول کشور' از آن نظر که در زمان جایگزینی زبان انگلیسی به جای فارسی در هند صورت گرفته از اهمیت دوچندانی برخوردار است.
وی خاطرنشان کرد زبان فارسی به مدت 700 سال در هند به عنوان زبان دیوانی و رسمی این کشور بوده است.
رایزن فرهنگی جمهوری اسلامی در دهلی نو گفت که نول کشور برای حفظ میراث ادبی و علمی ایران اهمیت ویژه ای داشت.
وی، هند را مهد نشر آثار مکتوب فارسی خواند و گفت چاپ بسیاری از نخستین روزنامه های فارسی در هند چاپ شد.
'مجید غلامی جلیسه' مدیر خانه کتاب ایران نیز جمع آوری حجم زیادی از آثار نخبگان درشعر ، تذکره ها ،فرهنگ ها توسط 'نول کشور' در حالیکه از برخی از این کتاب ها تنها یک نسخه باقی مانده بود را کاری بسیار ارزشمند دانست .
وی افزود: بزرگداشت این گونه افراد تاثیر گذار و بزرگ برای همه علاقه مندان به زبان فارسی یک تکلیف است.
مدیر خانه کتاب ایران از دانشجویان و محققان خواست برای تصحیح و نشر این اثار اهتمام لازم را داشته باشند.
پروفسور 'عارف مزقول' استاد فارسی از دانشگاه اردن نیز اهتمام منشی در نجات نسخه های خطی نادر را ارزنده دانست و گفت این اقدام باعث شده که این اثار ارزشمند به دست ما برسد.
دکتر 'ای کی سرکار' استاد زبان فارسی دانشگاه داکا بنگلادش، منشی نول کشور را از پیشگامان چاپ قرآن در عصر خود دانست و گفت با وجود تعداد زیاد کشورهای اسلامی وی دراین زمینه جزء افراد سرآمد بود.
پروفسور چندرا شکر رییس سابق گروه فارسی دانشگاه دهلی نیز 'منشی نول کشور' را فردی بسیار با ایمان دانست و گفت وی به هنگام چاپ قرآن نهایت احترام را به این کتاب بزرگ داشت.
پروفسور شریف حسین قاسمی رییس اسبق گروه فارسی دانشگاه دهلی درسخنانی به برخی از خدمات ارزنده نول کشور اشاره کرد و افزود:اگر خدمات ارزنده منشی نول کشور نبود بسیاری از کتاب ها به زبان فارسی در هند از بین می رفت .
وی افزود:حفظ علوم و بسیاری از کتاب های فارسی در هند مدیون تلاش های نول کشور است.
در مراسم افتتاحیه این همایش از تندیس 'منشی نول کشور' و تعدادی از کتاب های جدید که توسط خانه کتاب ایران در خصوص نول کشور منتشر شده ، رونمایی شد.
همچنین 'احمد علی برقی اعظمی' شاعر فارسی و اردو سرای هندی از بخش فارسی رادیو دهلی یکی از سروده هایش را در باره منشی نول کشور برای حضار قرائت کرد.
همایش بین المللی ' منشی نول کشور و انتشارات در هند استعماری ' از امروز به مدت دو روز با حضور استادان و صاحب نظران زبان فارسی از کشورهای ایران ،هند ،بنگلادش ،پاکستان،انگلستان و قزاقستان در دانشگاه دهلی آغاز شد.
این همایش با همکاری رایزنی فرهنگی جمهوری اسلامی ایران در دهلی نو ،دانشگاه دهلی ،خانه کتاب ایران ، موسسه مطالعات و بنیاد فارسی هند و شورای گسترش زبان اردو در دانشگاه دهلی در حال برگزاری است.
در مدت دو روز برگزاری این همایش بین المللی 26 مقاله توسط استادان و شرکت کنندگان ارائه می شود.
'نول کشور ' ناشر هندی درمدت 37 سال بین سالهای 1860تا 1895 بیشترین و ارزشمندترین کتاب ها به زبان فارسی را در چاپخانه نول کشور در هند منتشر کرد به گونه ای که تاکنون هیچکدام از ناشران ایرانی تاکنون از نظر تنوع و تعداد به وی نمی رسند.
کتاب‌های مثنوی معنوی، شاهنامه، جامع‌التواریخ، دیوان بیدل، دیوان صائب و کیمیای سعادت، اخلاق ناصری، آثار سنایی و جامی وآثار بسیاری از نویسندگان گمنام برای نخستین بار در این چاپخانه چاپ شده و به دست ایرانی‌ها رسیده است.
سمینار بین المللی ' منشی نول کشور و انتشارات در هند استعماری ' روز جمعه به کار خود در تالار 'ستیاکام بهاوان ' دانشکده علوم اجتماعی دهلی نو پایان می دهد.
آساق**انتشار دهنده:احمدعلی خلیل نژاد
انتهای پیام /*

استادان و صاحبنظران از خدمات ارزنده 'نول کشور' به زبان فارسی تقدیرکردند احمد علی برقی اعظمی' شاعر فارسی و اردو سرای هندی از بخش فارسی رادیو دهلی یکی از سروده هایش را در باره منشی نول کشور برای حضار قرائت کرد.

بیادِ ناخدائے سخن میر تقی میر میرؔ اقلیم سخن کے تھے حقیقی تاجدار احمد علی برقیؔ اعظمی


بیادِ ناخدائے سخن میر تقی میر
میرؔ اقلیم سخن کے تھے حقیقی تاجدار
احمد علی برقیؔ اعظمی
شخصیت ہے میر کی دنیائے اردو کا وقار
اُن کی عصری معنویت آج بھی ہے برقرار
ضوفگن ہے جس سے بزمِ علم و دانش آج تک
بحرِذخارِ ادب کی تھے وہ دُرِ شاہوار
تھا یہاں پر میرؔ جیسا صاحبِ فکر و نظر
اہلِ دہلی کے لئے ہے باعثِ صد افتخار
میرؔ کا رنگِ تغزل بن گیا ان کی کی شناخت
مرزاغالبؔ کو بھی تھا ان کے سخن پر اعتبار
میرؔ کا ثانی نہ تھا کوئی بھی ان کے دور میں
میرؔ اقلیمِ سخن کے تھے حقیقی تاجدار
ہیں نقوشِ جاوداں اُن کے خزاں ناآشنا
گلشنِ اردو میں ان کی ذات ہے مثلِ بہار
تھی کسی کو بھی نہیں تابِ سخن ان کے حضور
تھے معاصر ان کے اُن کے سامنے مثلِ غبار
صرف برقیؔ ہی نہیں ان کے سخن کا قدرداں
سب مشاہیرِ سخن میں کرتے ہیں اُن کا شمار

فیس بُک ٹائمزانٹرنیشنل کے۸۴ ویں عالمی آنلاین فی البدیہہ طرحی مشاعرے کے لئے میری طبع آزمائی احمد علی برقی اعظمی




فیس بُک ٹائمزانٹرنیشنل کے ۸۴ ویں عالمی آنلاین فی البدیہہ طرحی مشاعرے کے لئے میری طبع آزمائی
احمد علی برقی اعظمی
لازم ہے رکھ سنبھل کے ہر اک گام عشق میں
کیوں مفت میں تو ہوگیا بدنام عشق میں
سب کی زباں پہ جاری و ساری ہے اس کا نام
جس کا جنونِ شوق تھا ناکام عشق میں
جو اہلِ دل ہیں دل کی سمجھتے ہیں وہ زباں
ہوتی نہیں ہے جلوہ گہہِ عام عشق میں
رہتے نہیں ہیں ایک جگہہ رہروانِ شوق
ہوتی کہیں ہے صبح کہیں شام عشق میں
کل تک خیال یار سے آباد تھا وہ گھر
ویراں ہیں جس کےآج در و بام عشق میں
ساقی کی چشمِ ناز سے سرمست تھے کبھی
جو پی رہے ہیں دُردِ تہہِ جام عشق میں
سرمایۂ حیات ہے برقی مرے لئے
رنج و الم کا جو ملا انعام عشق میں

NASHTAR KHAIRABADI EK SHAKHSIYAT, KUCH YAADEN KUCH BAATEN






یادِ رفتگاں : بیادِ نشترؔ خیر آبادی مرحوم
احمد علی برقیؔ اعظمی
فخرِ خیر آباد، نشترؔ کا ہے معیاری کلام
جن کا دنیائے ادب میں ہے نمایاں اک مقام
ہے یہ صدیوں سے مشاہیرِ ادب کی زادگاہ
کام سے ہیں اہلِ خیرآباد اپنے نیکنام
خود بھی تھے وہ شاعرِ جادوبیاں مضطرؔ کے بعد
اُن کے تھے اجداد بھی اربابِ دانش کے امام
بادۂ عرفاں سے ہے سرشار ان کی شاعری
رنگ میں ہے اُن کے فکر و فن کا دلکش اہتمام
اُن کی غزلیں بخشتی ہیں ذہن کو اک تازگی
دیتی ہیں وہ اہلِ دل کو بادۂ عرفاں کا جام
صفحۂ تاریخِ اردو پر رہیں گے ثبت وہ
اُن کے برقیؔ مٹ نہیں سکتے کبھی نقشِ دوام



NASHTAR KHAIRABADI : EK SHAKHSIYAT, KUCH BAATEN , KUCH YAADEN BY DR.SYEDA IMRANA NASHTAR KHAIRABADI.


Ahmad Ali Barqi Azmi || All India Mushairah New Delhi || Gh Nabi Kumar غ...





عالمی اردو مجلس دہلی کے زیر اہتمام 6 اپریل 2019 کو قومی مشاعرے کا انعقاد کیا گیا۔ اس مشاعرے میں عبد المجید خان کے شعری مجموعے" دست ہنر " کی رسم اجرا بھی عمل میں آئی۔ جن شعرا و شاعرات نے اس مشاعرے میں شرکت کی اور اپنا کلام پڑھا ان میں ابوالفیض عزم سہریاوی، رئیس خان اعظم نگری، ڈاکٹر شعیب رضا خان وارثی، بشیر چراغ، احمد علی برقی اعظمی، عبدالمجید خان، معین قریشی، چشمہ فاروقی، فرحین اقبال نگار بانو ناز، غزالہ قمر، رضیہ حیدر خان، آشکارا خانم وغیرہ قابل ذکر رہے۔ اس موقعے پر عالمی اردو مجلس کے صدر ڈاکٹر حنیف ترین اور جنرل سیکرٹری غلام نبی کمار بھی موجود تھے۔ اس مشاعرے کی نظامت حنیف ترین اور ڈاکٹر بسمل عارفی نے انجام دی۔ یہ بزم پرساد کمپلکس بٹلہ ہاؤس میں سجائی گئی۔ حاضرین میں محترم حقانی القاسمی، ڈاکٹر ظہیر رحمتی وغیرہ بھی شامل تھے۔

Ahmad Ali Barqi Azmi || All India Mushairah New Delhi || Gh Nabi Kumar غ...





عالمی اردو مجلس دہلی کے زیر اہتمام 6 اپریل 2019 کو قومی مشاعرے کا انعقاد کیا گیا۔ اس مشاعرے میں عبد المجید خان کے شعری مجموعے" دست ہنر " کی رسم اجرا بھی عمل میں آئی۔ جن شعرا و شاعرات نے اس مشاعرے میں شرکت کی اور اپنا کلام پڑھا ان میں ابوالفیض عزم سہریاوی، رئیس خان اعظم نگری، ڈاکٹر شعیب رضا خان وارثی، بشیر چراغ، احمد علی برقی اعظمی، عبدالمجید خان، معین قریشی، چشمہ فاروقی، فرحین اقبال نگار بانو ناز، غزالہ قمر، رضیہ حیدر خان، آشکارا خانم وغیرہ قابل ذکر رہے۔ اس موقعے پر عالمی اردو مجلس کے صدر ڈاکٹر حنیف ترین اور جنرل سیکرٹری غلام نبی کمار بھی موجود تھے۔ اس مشاعرے کی نظامت حنیف ترین اور ڈاکٹر بسمل عارفی نے انجام دی۔ یہ بزم پرساد کمپلکس بٹلہ ہاؤس میں سجائی گئی۔ حاضرین میں محترم حقانی القاسمی، ڈاکٹر ظہیر رحمتی وغیرہ بھی شامل تھے۔

Tarique Azam Motivational Story by Saeed Ahmed Motivational Speaker: Courtesy:Saeed Ahmed

کچھ اور ہی سمجھے تھے ہوا اور ہی کچھ ہے : طرحی غزل نذر مولانا ابوالکلام آزاد

غزل
احمد علی برقیؔ اعظمی
بیمارِ محبت کی دوا اور ہی کچھ ہے
’’کچھ اور ہی سمجھے تھے ہوا اور ہی کچھ ہے‘‘
آزاد کی تحریر کا انداز الگ ہے
اقبال کے نغموں کی نوا اور ہی کچھ ہے
اس عہد میں ہر سمت ہے اک عالمِ محشر
ہے دل میں جو اک حشر بپا اور ہی کچھ ہے
بے سود قفس میں ہے ہر آسایشِ دنیا
پرواز کو آزاد فضا اور ہی کچھ ہے
جذبات میں اخلاص سے بڑھ کر نہیں کچھ بھی
بے لوث محبت کا مزا اور ہی کچھ ہے
فن پارے میں ہے پاس روایت بھی ضروری
تحریر کا اسلوب نیا اور ہی کچھ ہے
ہے کرب کا احساس جو جینے نہیں دیتا
ناکردہ گناہی کی سزا اور ہی کچھ ہے
زاہد کی ریا کار عبادت سے ہے افضل
اللہ کے بندوں کا بھلا اور ہی کچھ ہے
سیرت میں ہے جو حسن وہ صورت میں نہیں ہے
پاکیزگی و شرم و حیا اور ہی کچھ ہے
بے موت بھی مرنے پہ وہ کردیتا ہے مجبور
نظروں میں ہے جو تیرِ قضا اور ہی کچھ ہے
محدود ہے شاہوں کی گداؤں پہ نوازش
بندوں پہ یہ انعامِ خدا اور ہی کچھ ہے
یوں تو ہیں مشاہیر سخن شہرۂ آفاق
برقیؔ کی الگ طرزِ ادا اور ہی کچھ ہے

Picture Gallery Of Ahmad Ali Barqi Azmi With Literary Personalities

Poetic Compliment On 30th Anniversary Of World Wide Web By Ahmad Ali Bar...



Poetic Compliment On 30th Anniversary Of World Wide Web By Ahmad Ali Barqi Azmi From New Delhi


Courtesy Newsmx TV-Ahmad Ali Barqi Azmi Reciting His Poetry In Mushaira Jashne Aaine Hind At Ghalib Academy New Delhi On Completion 2 years of Newsmx Tv

Ahmad Ali Barqi Azmi Recites His Ghazal in Literary Meet Of Adab Sarai Jamia Naga...

a literary giant professor dr muzaffar hanfi ( a biographic sketch ) Courtesy:World News TV UK پروفیسر مظفر حنفی : ایک تعارف ڈاکٹر احمد علی برقی ؔ اعظمی





پروفیسر مظفر حنفی : ایک تعارف
ڈاکٹر احمد علی برقی ؔ اعظمی
مرجعِ اہلِ نظر جو ہیں مظفرؔ حنفی
بحرِ ذخارِ ادب کی ہیں وہ دُرِ شہوار
نظم اور نثر پہ حاصل ہے تبحر ان کو
سب کے منظورِ نظر کیوں نہ ہوں ان کے افکار
ان کے اسلوبِ بیاں سے ہے نمایاں سب پر
ندرتِ فکر و نظر اور سخن کا معیار
ان کے گلہائے مضامیں سے معطر ہے فضا
باغِ اردو میں ہیں اس عہد میں وہ مثلِ بہار
ان کی نظموں سے عیاں ہوتا ہے ان کا جوہر
منکشف ان پہ ہیں فطرت کے رموز و اسرار
وہ ہو تنقید کہ تحقیق ہیں سب میں ماہر
مایۂ ناز ہیں اس عہد کے برقی ؔ فنکار

In A Seminar On Urdu Adab Mein Krishna Bhagti At AHM School Chandan Van ...

A TRIBUTE TO KADER KHAN( A BOLLYWOOD WRITER AND ACTOR) BY DR. AHMAD ALI BARQI AZMI RECITED BY NAEEM SALARIA OF LONDON (UK)

مرزا غالب کی زمین میں عشق نگراردو شاعری کے ۶۲ ویں عالمی آنلاین فی البدیہہ طرحی مشاعرے کے لئے میری غزلِ مسلسل




عشق نگراردو شاعری کے ۶۲ ویں عالمی آنلاین فی البدیہہ طرحی مشاعرے کے لئے میری غزلِ مسلسل
ایک زمین کئی شاعر
مرزا غالب اور احمد علی برقی اعظمی
مرزا غالب
ہے آرمیدگی میں نکوہش بجا مجھے
صبح وطن ہے خندۂ دنداں نما مجھے
ڈھونڈے ہے اس مغنی آتش نفس کو جی
جس کی صدا ہو جلوۂ برق فنا مجھے
مستانہ طے کروں ہوں رہ وادی خیال
تا بازگشت سے نہ رہے مدعا مجھے
کرتا ہے بسکہ باغ میں تو بے حجابیاں
آنے لگی ہے نکہت گل سے حیا مجھے
کھلتا کسی پہ کیوں مرے دل کا معاملہ
شعروں کے انتخاب نے رسوا کیا مجھے
واں رنگ ‌ہا بہ پردۂ تدبیر ہیں ہنوز
یاں شعلۂ چراغ ہے برگ حنا مجھے
پرواز‌ ہا نیاز تماشائے حسن دوست
بال کشادہ ہے نگۂ آشنا مجھے
از خود گزشتگی میں خموشی پہ حرف ہے
موج غبار سرمہ ہوئی ہے صدا مجھے
تا چند پست فطرتیٔ طبع آرزو
یا رب ملے بلندیٔ دست دعا مجھے
میں نے جنوں سے کی جو اسدؔ التماس رنگ
خون جگر میں ایک ہی غوطہ دیا مجھے
ہے پیچ تاب رشتۂ شمع سحر گہی
خجلت گدازیٔ نفس نارسا مجھے
یاں آب و دانہ موسم گل میں حرام ہے
زنار واگسستہ ہے موج صبا مجھے
یکبار امتحان ہوس بھی ضرور ہے
اے جوش عشق بادۂ مرد آزما مجھے
احمد علی برقیؔ اعظمی
کرکے اسیرِ غمزہ و ناز و ادا مجھے
اے دلنواز تونے یہ کیا دے دیامجھے
جانا تھا اتنی جلد تو آیا تھا کس لئے
ایک ایک پل ہے ہجر کا صبر آزما مجھے
بجھنے لگی ہے شمعِ شبستانِ آرزو
اب سوجھتا نہیں ہے کوئی راستا مجھے
آنکھیں تھیں فرشِ راہ تمہارے لئے سدا
تم آس پاس ہو یہیں ایسا لگا مجھے
یہ دردِ دل ہے میرے لئے اب وبالِ جاں
ملتا نہیں کہیں کوئی درد آشنا مجھے
کشتئ دل کا سونپ دیا جس کو نظم و نسق
دیتا رہا فریب وہی ناخدا مجھے
رہزن سے بڑھ کے اُس کا رویہ تھا میرے ساتھ
پہلی نگاہ میں جو لگا رہنما مجھے
کرتے ہیں تجزیہ سبھی ان کا بقدرِ ظرف
’’ شعروں کے انتخاب نے رسوا کیا مجھے ‘‘
اب میں ہوں اور خوابِ پریشاں ہے میرے ساتھ
کتنا پڑے گا اور ابھی جاگنا مجھے
کیا یہ جنونِ شوق گناہِ عظیم ہے
کس جُرم کی ملی ہے یہ آخر سزا مجھے
برقیؔ نہ ہو اُداس سرِ رہگذر ہے وہ
پیغام دے گئی ہے یہ بادِ صبا مجھے




Waseem Ahmad Saeed in conversation with Prof. Anisur Rahman at Rekhta St...

اسلامی انقلاب اور ایرانی عوام کو خراج تحسین - 08 فروری 2019 بشکریہ سحر ٹی وی ایران

Glimpses of A Function Organized by Iran Culture House New Delhi In Connection With 40th Anniversary Of Revolution Of Islamic Republic of Iran









Glimpses of A Function Organized by Iran Culture House New Delhi In Connection With 40th Anniversary Of Revolution Of Islamic Republic of Iran

اسلامی انقلاب اور ایرانی عوام کو خراج تحسین - 08 فروری 2019 بشکریہ سحر ٹی وی




ہے سحر ٹی وی کی یہ اک   روح پرور پیشکش
مستحق ہے داد  کا  شمشاد کا حسنِ بیاں
پیش کرتا ہوں مبارکباد میں اس کی انھیں
ان کا یہ حسنِ عمل ہو کامیاب و کامراں
احمد علی  برقی اعظمی





حضرت امیر خسرو دہلوی کی ایک فارسی غزل کا منظوم اردو مفہوم ڈاکٹر احمد علی برقیؔ اعظمی بشکریہ شعرووسخن ڈاٹ نیٹ کناڈا



حضرت امیر خسرو دہلوی کی ایک فارسی غزل کا منظوم اردو مفہوم
ڈاکٹر احمد علی برقیؔ اعظمی
ابرباراں میں ہے اب مجھ سے مرا یار جدا
کیا کروں ایسے میں جب مجھ سے ہو دلدار جدا
چھوڑ کر جاتا ہے بارش میں مجھے یار مرا
میں الگ روتا ہوں روتا ہے الگ یار جدا
باغ سرسبز ہے، موسم ہے حسیں ، سبزہ جواں
رہتے ہیں ایسے میں اب بلبل و گلزار جدا
تونے کررکھا تھا زلفوں میں گرفتار مجھے
کردیا کیوں مجھے اس بند سے یکبار جدا
چشمِ پُرنَم مری خونبار ہے یہ تیرے لئے
تجھ سے رہ سکتا نہیں دیدۂ خونبار جدا
کیا کروں گا میں یہ اب آنکھ کی نعمت لے کر
مجھ سے ہوجائے گی جب نعمتِ دیدار جدا
درمیاں آنکھوں کے ہیں سیکڑوں پردے حائل
لوٹ آ جلد تو اور کردے یہ دیوار جدا
جا ن دے دوں گا اگر چھوڑ کے تو مجھ کو گیا
تجھ میں ہے جان مری مجھ سے نہ ہو یار جدا
حسن باقی نہ رہے گا ترا خسروؔ کے بغیر
گل سے ہرگز نہیں رہ سکتا ہے گلزار جدا

فارسی غزل حضرت امیر خسرو دہلوی
امیرخسرو دهلوی » دیوان اشعار » غزلیات
ابر می بارد و من می شوم از یار جدا
چون کنم دل به چنین روز ز دلدار جدا
ابر و باران و من و یار ستاده به وداع
من جدا گریه کنان، ابر جدا، یار جدا
سبزه نوخیز و هوا خرم و بستان سرسبز
بلبل روی سیه مانده ز گلزار جدا
ای مرا در ته هر موی به زلفت بندی
چه کنی بند ز بندم همه یکبار جدا
دیده از بهر تو خونبار شد، ای مردم چشم
مردمی کن، مشو از دیده خونبار جدا
نعمت دیده نخواهم که بماند پس از این
مانده چون دیده ازان نعمت دیدار جدا
دیده صد رخنه شد از بهر تو، خاکی ز رهت
زود برگیر و بکن رخنه دیوار جدا
می دهم جان مرو از من، وگرت باور نیست
پیش ازان خواهی، بستان و نگهدار جدا
حسن تو دیر نپاید چو ز خسرو رفتی
گل بسی دیر نماند چو شد از خار جدا





Poetic Compliments Of Ahmad Ali Barqi Azmi In Persian On 40th Anniversary Of Islamic Republic Of Iran

Justice Aftab Alam Speaks in Prize Distribution Function Of Delhi Urdu Academy For The Selected Books 2013

بزمِ سخنوراں کے ۱۵۶ ویں عالمی آنلاین فی البدیہہ طرحی مشاعرے کے لئے میری طبع آزمائی احمد علی برقی اعظمی





بزمِ سخنوراں کے ۱۵۶ ویں عالمی آنلاین فی البدیہہ طرحی مشاعرے کے لئے میری طبع آزمائی
احمد علی برقی اعظمی
دیکھنے میں شعلہ ہے اور کبھی وہ شبنم ہے
جب سے اُس کو دیکھا ہے اک عجیب عالم ہے
منتشر نہ ہوجائے زندگی کا شیرازہ
تھا جو جانِ جاں میری آج مجھ سے برہم ہے
کردیا مجھے برباد جس کی بیوفائی نے
پوچھتا ہے وہ مجھ سے تجھ کو کون سا غم ہے
جو کبھی نہیں کرتا میری پرسشِ احوال
میرے اس کی دلجوئی زخمِ دل کا مرہم ہے
حالِ دل کی جو میرے کررہی ہے غمازی
مثلِ ابرِ باراں وہ میری چشمِ پُرنَم ہے
ہے وہ مُفسدِ دوراں آج ایک درپردہ
صلح کا لئے اپنے ہاتھ میں جو پرچم ہے
یاد ہے مجھے برقیؔ اب بھی اس کی سرگوشی
اُس کی نقرئی آواز سازِ دل کا سَرگم  ہے

Ek Jashn e Bawaqar Hai 26 January By Ahmad Ali Barqi Azmi Recited by Maulana :Inamullah Sabah Courtesy:Love Islam Channel





Ek Jashn e Bawaqar Hai 26 January By Ahmad Ali Barqi Azmi Recited by Maulana :Inamullah Sabah
Courtesy:Love Islam Channel
Hai yeh Love Islam Channel ki Khsoosi peshkash
Mustahaq hai daad ka lahn e Inamullah Sabah

Pesh karta hooN unheiN is ke liye maiN tahniyat
Qaem o dayam rahe un ka hamesha izz o jaah

De jaza e khair unheiN is ke liye Parwardigar
Hind ki azmat ki hai yeh peshkash unki gawaah
Sepaas Guzaar
Ahmad Ali Barqi Azmi

Ahmad Ali Barqi Azmi Reciting His Ghazal In Literary Meet Of Alhikmah Foundation In Zakir Nagar New Delhi

سپہرِ شعر پہ روشن ہے آفتابِ سخن ڈاکٹر سیدہ عمرانہ نشتر خیرآبادی اٹلانٹا، امریکا




سپہرِ شعر پہ روشن ہے آفتابِ سخن
ڈاکٹر سیدہ عمرانہ نشتر خیرآبادی اٹلانٹا، امریکا
میرے نوکِ قلم میں اتنا توسلیقہ اور شعور نہیں ہے کہ میں جناب ڈاکٹر احمد علی برقیؔ اعظمی کی عظیم شخصیت اور شعورِ فکر و فن کو بخوبی صفحۂ قرطاس پر قلمبند کر سکوں لیکن میں یہ ضرور چاہوں گی کہ اُن کی اعلٰی ذات و صفات ، فن و شخصیت، ان کے وسعتِ قلب کی عظمتوں، اُن کے کردار کی اونچائیوں ، اوراُن کے قلم کی خوبیوں کو حُسنِ صداقت کے ساتھ آپ کے سامنے بیان کر سکوں۔ اللہ مددگار ہے وہ حقدار کو اُس کا حق دلوا ہی دیتا ہے۔ اعظم گڈھ کی سرزمیں کئی گہرہائے نایاب کی پروردہ رہی ہے۔کسی مبارک گھڑی اسی سرزمین نے ایک بیش قیمت ہیرا رحمت الٰہی برقؔ اعظمی جیسے علم و دانش کے سکندر، ایک باکمال جوہری کی نذر کیا جسے انھوں نے اپنے دستِ مبار ک سے تراش خراش کے اردو ادب کے خزانے کو سونپ دیا۔ اس کوہ نور ہیرے کی چمک دمک اور آب و تاب کو دیکھ کر اربابِ بصیرت کی آنکھیں چوندھیاگئیں۔دورِ حاضر کے اہلِ قلم سکتے میں آگئے۔ اردو ادب کے بڑے بڑے شہسوار انگشت بدنداں رہ گئے۔ اس کوہِ نور کی چمک ملک کی آہنی دیواروں کو پار کرتی ہوئی بیرونی ملکوں میں جا پہنچی اور ہر اہلِ دل اور اہلِ قلم اس سے متاثر اور مرعوب ہوئے بغیر نہ رہ سکا۔پھراس کی چمک اور آب و تاب کے چرچے ہر زبان پر ہونے لگے۔ یہ نایاب کو ہ نور ہیرا کوئی اور نہیں عہدِ حاضر کے عظیم شاعر ہمارے جانے پہچانے ڈاکٹر احمد علی برقیؔ اعظمی صاحب ہیں۔ ڈاکٹر برقیؔ اعظمی صاحب سے میری ملاقات کبھی اور کہیں نہیں ہوئی ۔ میں نے اُن کے فن اور شخصیت کو جو بھی سمجھا ہے اُن کے وسیع اور بہترین کلام کی گہرایؤں میں اُتر کر سمجھا ہے۔ اردو ادب کے فلک پر سیکڑوں شمس و قمر اپنی چمک دمک کے ساتھ جگمگا رہے ہیں۔اور کائناتِ ادب میں اپنی لطیف چاندنی بکھیر رہے ہیں۔ لیکن جب ہم ڈاکٹر برقی اعظمی کے دلنشیں اور دلکش کلام ’’ روح سخن‘‘ کا مطالعہ کرتے ہیں تو ہمیں یہ محسوس ہوتا ہے کہ صبح ہو گئی۔اور آسمان سخن پر چمک رہا ہے ایک آفتاب تنہاجس کی برقی شعائیں زندگی کے ہر پہلو ،حیات و کائنات کے ہر موضوع، دورِ حاضر کے ہر تقاضے انسانیت، محبت امن اور شانتی جیسے اعلی جذبوں ، قوم و ملت کی دکھتی رگوں، مذہب کی اٹھی ہوئی گھٹاؤں ، دین و ایمان کی پرنور برستی بارشوں اور سائنس و ٹکنولوجی کی فلک بوس عمارتوں کو اُجاگر کر رہی ہیں۔ ڈاکٹر برقی اعظمی کی اردو ادب میں آمد ایک خوشگوار واقعہ ہے۔خزاں کے دور کے بعد جب بہار آتی ہے تو کیا لگتا ہے۔ اُن کی مبارک آمد پر کچھ ایسا ہی ہوا۔ اردوا ادب کا چہرہ فخر اور خوشی سے کِھل اُٹھا ۔ اردو کی انجمنیں لہکنے اور مہکنے لگیں۔ اردو زبان پر جیسے نکھار آ گیا۔ شعر و سخن میں جیسے زندگی آگئی۔اردو زبان کی ڈوبٹی نبضوں کو جیسے حیاتِ نو مل گئی۔ تشنگانِ ادب کو جیسے قرارآ گیا۔ شعرو سخن کے اس تاجدار کی اردو ادب میں جب تاجپوشی ہوئی تو میرؔ ، غالبؔ ، داغؔ ، فانیؔ ، اقبالؔ جگرؔ ، جوشؔ ، فیضؔ اور احمد فرازکی روحوں کو جیسے وجد آگیا۔ وہ سجدۂ شکر بجا لائیں اور اپنے اس فرزندِ عظیم کے لئے دعاگو ہو کر بصد شکر جھوم اُٹھیں۔ کوئی تو ہے جو ان کی وراثت کو آگے بڑھا رہا ہے۔کوئی تو ہے جو شعر و سخن کے جسم میں روح واپس لوٹا رہا ہے۔کوئی تو ہے جو اردو ادب میں قوس قزح کا رنگ بھر رہا ہے۔کوئی تو ہے جو مرحومین ادیبوں ، شاعروں اور فنکاروں کی میتوں پر آنسو بہا رہا ہے۔ کوئی تو ہے جو اُن کی تُربتوں پر دعائے مغفرت کے ساتھ اپنے اشعار کے گُلہائے عقیدت چڑھا رہا ہے۔ کوئی تو ہے جو ان بے چراغ اور بے پھول قبروں پر یادوں کے دئے جلا رہا ہے۔حضرت رحمت الٰہی برقؔ اعظمی صاحب کی روحِ مبارک اپنے اس نیک دل فرزند کی اقصائے عالم میں توقیر دیکھ کر خوشی اور فخر سے جھوم رہی ہوگی۔ ڈاکٹر برقیؔ اعظمی کا کلام دلنشیں ’’ روح سخن ‘‘ سخن کی روح تو ہے ہی اُن کی فکری و فنی صلاحیتوں کا نچوڑ بھی ہے۔اُن کے خوابوں کی تعبیر ہے۔اُن کی کائناتِ حُسن کی تصویر ہے۔ ان کی دولتِ عشق کی جاگیر ہے۔ اُن کا سرمایۂ حیات ہے۔یہ وہ گلستان سخن ہے جہاں خزاں آتی ہی نہیں۔ اپنے مجموعۂ کلام کے بارے میں وہ لکھتے ہیں :
مجموعۂ کلام ہے ’’ روح سخن‘‘ مرا
 پیشِ نظر ہے جس میں یہاں فکر و فن مرا
 گلہائے رنگا رنگ کا گلدستۂ حسیں
 ٓاشعار سے عیاں ہے یہی ہے چمن مرا
 یہ عظیم شاعر توقیر کی بلندیوں کو چھوتے ہوئے بھی اپنے والدِ گرامی حضرت رحمت الٰہی برقؔ اعظمی کے احترام میں اپنے فرائضِ فرزندگی سے سبکدوش نہیں ہوتا اور نہایت ادب و احترام کے ساتھ اپنے طاقِ دل میں اُن کی یاد کا چراغ جلائے حقِ فرزندگی ادا کرتے ہوئے لکھتا ہے:
 میرے والد کا نہیں کوئی جواب
 جو تھے اقصائے جہاں میں انتخاب
ان کا مجموعہ ہے ’’ تنویرِ سخن‘‘
جس میں حُسنِ فکر و فن ہے لاجواب
 ایک اور جگہ ڈاکٹر برقیؔ اعظمی صاحب فرماتے ہیں:
 آج میں جو کچھ ہوں وہ ہے ان کا فیضانِ نظر
 اُن سے ورثے میں ملا مجھ کو شعورِ فکر و فن
 اپنے وطن پر فخراورناز کرتے ہوئے وہ لکھتے ہیں:
 شہر اعظم گڈھ ہے برقیؔ میرا آبائی وطن
جس کی عظمت کے نشاں ہیں ہر طرف جلوہ فگن
 اپنے بارے میں وہ فرماتے ہیں :
 میرا سرمایۂ حیات ہے جو
وہ ہے میرے ضمیر کی آواز
 ڈاکٹر برقیؔ اعظمی صاحب کا بہترین اور ضخیم مجموعۂ کلام ’’ روح سخن‘‘ ادب کی دنیا میں شان کے ساتھ جلوہ فگن ہے۔ اس سے کسی کو انکار نہیں ہو سکتا۔ یہ وہ گلدستۂ سخن ہے جس میں رنگ رنگ کے پھول مہک رہے ہیں ۔ بارشِ انوار میں نہائی ہوئی اُن کی حمدیں حسنِ ایمان کے ساتھ قارئین کے دل میں اُتر جاتی ہیں۔ اللہ کی بارگاہ میں وہ نہایت ادب و احترام کے ساتھ اپنے جذبات کا نذرانہ پیش کرتے ہیں:
میں شکر ادا کیسے کروں تیرے کرم کا
’’ حقا کہ خداوند ہے تو لوح و قلم کا‘‘
طوفانَ حواث میں ہے برقیؔ کا سفینہ
کر سکتا ہے اب توہی ازالہ مرے غم کا
 ایک اور جگہ ڈاکٹر برقیؔ صاحب فرماتے ہیں:
 اے خدا تو نے زندگی بخشی
کیف و سرمستی و خوشی بخشی
 تیرا منت گذارہے برقیؔ
جس کے نغموں کو نغمگی بخشی
 عشقِ نبیﷺسے سرشار ان کا نعتیہ کلام کیف حضوری کی بہترین مثال ہے:
 نبی کی ذات زینت بن گئی ہے میرے دیواں کی
انہیں کا نور ہے جو روشنی ہۂ بزمِ امکاں کی
 وہی ہیں شان میں جن کی ہے ورفعنا لَکَ ذکرک
 ثناخواں اُن کی عظمت کی ہر اک آیت ہے قرآں کی
ثنائے رسالت مآب میں ایک اور جگہ ڈاکٹر برقیؔ اعظمی لکھتے ہیں:
 کیا کوئی کرے شمعِ رسالت کااحاطہ
 ممکن نہیں اس نور کی عظمت کا احاطہ
غزل کے بارے میں برقی صاحب کے خیالات بہت جامع اور واضح ہیں۔ وہ فرماتے ہیں:
 احساس کا وسیلۂ اظہار ہے غزل
 آئینہ دار ندرتِ افکار ہے غزل
 اردو ادب کو جس پہ ہمیشہ رہے گا ناز
اظہارِ فکر و فن کا وہ معیار ہے غزل
 آتی ہے جس وسیلے سے دل سے زبان تک
 خوابیدہ حسرتوں کا وہ اظہار ہے
غزل برقیؔ کے فکر و فن کا مرقع اسی میں ہے
 برقؔ اعظمی سے مطلعِ انوار ہے غزل
حسن و عشق ڈاکٹر برقیؔ اعظمی کے کلام کا نہایت وسیع اور دلکش موضوع ہے۔رنگ و نور میں نہائی برقیؔ اعظمی کی گُل چہرہ غزلیں اردو ادب میں نہایت اہم اور معتبر مقام رکھتی ہیں۔اُن کے کلام سے چند اشعار پیشِ خدمت ہیں:
بات ہے ان کی بات پھولوں کی
ذات ہے اُن کی ذات پھولوں کی
 وہ مجسم بہار ہیں اُن میں
 ہیں بہت سی صفات پھولوں کی
 کچھ اور خوبصورت اشعار دیکھئے:
 ہیں اُس کے دستِ ناز میں دلکش حنا کے پھول
اظہارِ عشق اُس نے کیاہے دکھا کے پھول
پاکیزگئ نفس ہے آرائشِ خیال
 ہیں آبروئے حُسن یہ شرم و حیا کے پھول
 پھولے پھلے ہمیشہ ترا گلشنِ حیات
میں پیش کررہا ہوں تجھے یہ دعا کے پھول
 برقیؔ ہے بے ثبات یہ دنیائے رنگ و بو
دیتے ہیں درس ہم کو یہی مسکرا کے پھول
 جذبۂ عشق کو برقیؔ صاحب کے کلام میں بہت اہمیت حاصل ہے۔ وہ فرماتے ہیں۔
عشق ہے در اصل حُسنِ زندگی
 عشق سے ہے زندگی میں آب و تاب
 اشکوں کی سیاہی سے لکھی ہوئی برقیؔ صاحب کی زار زار عشقیہ غزلیں اردو ادب کا ایک بہترین سرمایہ ہیں۔پڑھنے والوں کو یوں محسوس ہوتا ہے جیسے شبِ فراق ہے۔تنہائی ہے۔اندھیرا ہے۔ اُداسی ہے۔چراغِ دل ٹِمٹما رہاہے۔یوں محسوس ہوتا ہے آسمان میں ماہتاب چمک رہا ہے۔ جوشِ جنوں اسے پانے کے لئے بیتاب در بدر پھر رہا ہے۔یوں محسوس ہوتا ہے زندگی کی ریل گاڑی نا معلوم منزل کی طرف چلی جا رہی ہے اور یادوں کا ایک ہجوم ہے جو ساتھ ساتھ چل رہا ہے۔یوں محسوس ہوتا ہے صحرا کی وسعتوں میں جلتی ہوئی ریت پر کوئی برہنہ پا جانا جاناں پکارتا بھٹک رہا ہے۔ نفرتوں کی جنگ پوری دنیا لڑ رہی ہے۔اُس ے متاثر ہو کر حساس شاعر کا دل دنیا کے تمام مذاہب و ملت کے لوگوں کو پیامِ محبت سنا رہا ہے۔ ڈاکٹر برقیؔ صاحب کے کچھ اشعاراس سلسلے میں ملاحظہ فرمائیں۔
 امن عالم کی فضا ہموار ہونا چاہئے
 ’’ آدمی کو آدمی سے پیار ہونا چاہئے‘‘
 جب ہم ڈاکٹر برقیؔ اعظمی کے کلام کا بنظر دقیق تجزیہ کرتے ہیں توہمیں زبان اور بیان کی بہت سی خوبیاں اس میں نظر آتی ہیں جو اُن کی دلکش تحریروں کو حُسن بخشتی ہیں۔اُن کے چہکتے ہوئے ردیف اور قافیے ، اُن کی حیران کر دینے والی تشبیہات اور استعارے، اوراُن کے دل کو چھونے والے محاورے بہت خوبصورتی کے ساتھ ان کے کلام میں استعمال ہوئے ہیں۔کچھ مثالیں ملاحظہ فرمائیں۔
جس کو وہ پڑھتا رہے گا عمر بھر لکھ جاؤں
گا خط میں اس کے نام ایسا نامہ بر لکھ جاؤں گا
ایسا ہوگا میری اس تحریر میں سوز و گداز
موم ہو جائے گا پتھر کا جگر لکھ جاؤں گا
 اشک پلکوں پہ چمکتے ہیں ستاروں کی طرح
 میرا کاشانۂ دل اب ہے مزاروں کی طرح
یہاں اشک ستاروں کی طرح ، خانۂ دل مزاروں کی طرح اور پتھر کا جگر وغیرہ ان کی تشبیہات اور استعارں کی خوبصورت مثالیں ہیں۔ میری آنکھیں کُھلی کی کُھلی رہ گئیں وہ نظر آیا جب اک زمانے کے بعد برقیؔ کی اس کے سامنے کوئی گلی نہ دال جو گل اسے کھلانے تھے اس نے کھلا دئے یہاں محاورے جیسے آنکھیں کھلی کی کھلی رہ جانا ، گل کھلانا اور دال نہ گلنا محاورے ہیں جن کو بڑی خوبی کے ساتھاستعمال کیا گیا ہے۔ داکٹر برقیؔ اعظمی کی کائناتِ شاعری ’’ روحِ سخن‘‘ میں آسمان کی وسعتیں اور زمین کی عظیم شفقتیں ہیں۔ سمندر کی گہرائیاں ہیں۔ پہاڑوں کی بُردباری ہے۔ جنگلوں کی ضخامت ہے۔ سورج کی فراخدلی ہے۔ آبشاروں کی بے کلی ہے۔ برق کی تڑپ ہے۔ جھومتے درختوں کی لہک ہے۔ مہتاب کا حسن ہے۔ بہاروں کی رنگت ہے۔شبنم کے آنسو ہیں، کلیوں کی چٹک اور شوخی ہے،پھولوں کی رنگت ہے،بہاروں کی گونج ہے،تتلیوں کا ذوق و شوق ہے، صبح سویرے کا پرنور اُجالا ہے،تپتی دوپہروں کی تپش ہے،شامِ غم کی اُداسی ہے، سیاہ راتوں کی وحشتیں ہیں، شبِ فراق کی اشکباری ہے، اورعبادتگاہوں کی پاکیزگی ہے۔ ایسا لگتا ہے کہ زندگی کے تمام رنگ، تمام موسم اور کائنات کے تمام حسن اُن کی شاعری میں بحسن و خوبی اُتر آئے ہیں۔دلکش اور خوش آہنگ ردیف و قافئے،دمکتی تشبیہات ، کہکشاں سی زباندانی سے منور یہ کلام اُن کی کاوشوں کا پھل ہے۔اُن کا سرمایۂ زیست ہے۔سخن کے اس شہنشاہ کی ہرغزل ایک حسین تاج محل لگتی ہے۔ ڈاکٹر احمد علی برقیؔ کا تخلیقی سفرخلوص اور محبت کے گیت گاتا ہوا نفرت کی دیواروں کو توڑتا ہوا،ملکوں کی سرحدوں کو پار کرتا ہوا، انسانیت اور تہذیب کے وقار کو بڑھاتا ہوا، امن اور شانتی کا درس دیتا ہوا،حق کا پرچم اُٹھائے دورِ حاضر کے تقاضوں کوپورا کرتا ہوا آگے بڑھ رہا ہے۔اللہ کرے زورِ قلم اور زیادہ۔خداوند کریم انہیں شاد و آباد رکھے ۔ انہیں ہر قدم پر کامیابی اور کامرانی عطا فرمائے۔


Top of Form
Bottom of Form